کم پانی پینے کیوجہ سے کون کونسی بیماریوں میں مبتلا ہوسکتے ہیں؟

اگر پانی مناسب مقدار میں نہ پیا جائے تو ہم کئی طرح کی بیماریوں میں مبتلا ہو جائیں گے۔

آئیں اس بارے میں جاننے کی کوشش کرتے ہیں۔

1۔ وزن کا بڑھنا:

پانی کم پینے سے ہماری بھوک کی مقدار اور طلب بڑھ جاتی ہے، پانی اگر بار بار پیا جاتا ہے تو اس سے پیٹ بھرا بھرا محسوس ہوتا ہے ۔

ہم نے بہت سے لوگوں کو دیکھا ہے کہ وہ اس لئے پانی کم پیتے ہیں کہ کھانے سے پہلے پانی پی لیا تو بھوک مر جائے گی۔

اسی وجہ سے وہ پانی نہیں پیتے تو ان کو ہر وقت کچھ نہ کچھ کھانے کی طلب ہوتی رہتی ہے اورکھا کھا کر ان کا وزن بڑھتا رہتا ہے۔

2۔ بدہضمی اور قبض:

پانی کم پینے سے آنتیں خشک ہو جاتی ہیں، اور پیٹ کا درد، گیس اور قبض کا مسئلہ درپیش رہتا ہے۔

کم پانی پینا ڈی ہائیڈریشن اور جسم کی خشکی بڑھانے کا باعث بھی بنتا ہے ۔ اسی لئے اگر پیٹ کے مسائل سے بچنا چاہتے ہیں تو پانی کا استعمال زیادہ کریں۔

3۔ پیشاب کے انفیکشن کا خطرہ:

پانی کم پینا گردوں اور پیشاب کے مسائل کو جنم دیتا ہے۔ جس سے پیشاب کا انفیکشن یعنی یوٹی آئی کا امکان پیدا ہو جاتا ہے۔

پانی کم پینے سے پیشاب آنا کم ہو جاتا ہے اور فاسد مادے جسم سے خارج نہیں ہوپاتے جس کی وجہ سے یوٹی آئی کا خدشہ پیدا ہو جاتا ہے۔

4۔ سانس میں سے بدبو آتی ہے:

جو لوگ پانی کم پیتے ہیں ان کے منہ سے، یا سانس سے بو آنے لگتی ہے کیونکہ پانی نہ پینے کی وجہ سے منہ میں خشکی پیدا ہو جاتی ہے اور اس سے منہ میں بیکٹیریا پیدا ہو جاتے ہیں جوکہ سانس میں بدبو پیدا کردیتے ہیں۔ اس لئے پانی زیادہ پئیں اور منہ کی بو سے نجات پائیں۔

5۔ جلد کے مسائل:

پانی کم پینا جلد کے مسائل کا بھی سبب بن جاتا ہے ، جلد روکھی اور بے رونق ہو جاتی ہے اور اس کی چمک دمک ختم ہوجاتی ہے۔

اس کے ساتھ چہرے پر داغ دھبے اور مہاسوں کا مسئلہ بھی پیدا ہوجاتاہے۔

چہرے پر جھریاں جلدی پڑتی ہیں، اسی لئے اگر جلد کے ان تمام مسائل سے بچنا چاہتے ہیں تو پانی زیادہ پئیں۔

نوٹ:

یہ ایک عام معلوماتی مضمون ہے اگر آپ ایسی کسی بیماری میں مبتلا ہیں کہ پانی کا زیادہ پینا آپ کی بیماری کو بڑھا سکتا ہے تو پھر زیادہ پانی پینے سے گریز کریں ۔ یا اپنی طبیعت اور بیماری کے لحاظ سے ڈاکٹر کے مشورے سے پانی پئیں۔

 

کیٹاگری میں : صحت

اپنا تبصرہ بھیجیں